Urdu Class 10th Nam Deo Mali Notes MCQs Questions Bank

urdu 10th notes Sabaq 10

1.   با غ کے دا رو غہ کا نا م تھا   

 
 
 
 

2. ڈا کٹر سید سرا ج الحسن کا ذوق مشہو ر تھا

 
 
 
 

3. با و ٔ لی ’’ کا کیا مطلب ہے 

 
 
 
 

4.   مقبر ے کا با غ کس کی نگرا نی میں تھا؟

 
 
 
 

5.   مقبر ہ را بعہ دورا نی واقع ہے ؛  

 
 
 
 

6.   نا م دیو ما لی دوائیں لا یا تھا    

 
 
 
 

7. ‘‘ نا م د یو ۔ما لی ’’ کے مصنف ہیں   

 
 
 
 

8.   جا پا ن کے دا ر لحکو مت کا نا م ہے ۔  

 
 
 
 

9.  ڈا کٹر سید سرا ج الحسن نوا ب یا ر جنگ بہا در کس شعبہ کے نا ظم تھے ؟ 

 
 
 
 

10. گد لا پا نی بھی پو دو ں کے حق میں تھا 

 
 
 
 

11.     حضو ر نظا م کو کہا ں با غ لگا نے کا خیا ل ہوا  

 
 
 
 

12.   نا م دیو کو کس سے عشق تھا ؟  

 
 
 
 

13.    ڈا کٹر سرا ج الحسن کی ایک خو بی یہ تھی کہ وہ تھے  

 
 
 
 

14. نا م د یو کی ذا ت تھی 

 
 
 
 

15.     ایک روز با غ پر یو ر ش ہو ئی   

 
 
 
 

16.     مصنف نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کو بے کا ر کہا ہے ۔

 
 
 
 

17.   نا م د یو ما لی کی اولا د تھی    

 
 
 
 

18.   ‘‘ نا م دیو ما لی ’’ مو لو ی عبدالحق کی کس تصنیف سے ما خو ذ ہے ؟  

 
 
 
 

19.   اورنگ آ با د کا دوسرا نا م ہے

 
 
 
 

20.   با غو ں میں رہتے ہو ئے نا م دیو ما لی کو شنا خت ہو گئی تھی   

 
 
 
 

21.  ‘‘ تھا نؤ لا ’ کے معنی ہے    

 
 
 
 

22.  ایرا ن کا دا ر لحکو مت ہے  

 
 
 
 

23.   ا نسا نو ں میں کیا شے موروثی ہو گئی ہے ؟  

 
 
 
 

24.    نا م دیو کس کے علا ج کا ما ہر تھا ؟ 

 
 
 
 

25. نا م د یو نے چمن کو بنا ر کھا تھا 

 
 
 
 

26.   مو لو ی عبدا لحق کا مکا ن تھا

 
 
 
 

27.   شا ہی با غ میں نا م دیو کا کا م تھا

 
 
 
 

28. ‘‘ نا م دیو ما لی ’’ اپنے پودو ں کو سمجھتا تھا   

 
 
 
 

مختصر سوالات

نا م دیو مالی نے انعام لینے سے کیو ں انکا ر کیا ؟
نا م دیو نے پا نی کی قلت کے زما نے میں چمن کو کیسے شاداب رکھا ؟
نا م دیو مالی کے اوصا ف میں سب سے نما یا ں وصف کیا ہے ؟
مصنف کے خیال میں اچھا انسان کیسے بنا جا سکتا ہے ؟
نا م دیو  کی مو ت کا سبب کیا تھا ؟
لوگ بچو ں کے علا ج کے لیے نا م دیو کے پا س کیوں آتے تھے ؟
کسی پودے کو کیڑا لگ جاتا تو نام دیو کیا کرتا؟
مصنف کو نام دیو کی کون سی حر کتیں دیکھ کر تعجب ہوتا؟
کون سی خوبی کسی کی میراث نہیں ہیں؟
مولوی عبدالحق کی کون کون سی تصانیف ہیں؟
مولوی عبدالحق کے کب بی-اے کیا اور کس شہر میں چلے گئے؟
ایم -اے -او کالج میں مولوی عبدالحق کے ہم جماعت کون تھے اور شاگرد کون تھے؟
مولوی عبدالحق نےا بتدائی تعلیم کہاں سے حاصل کی اور کس کالج میں داخلہ لیا؟
مولوی عبدالحق کب اور کہاں پیدا ہوئے؟
نام دیو کی زندگی سے ہمیں کیا سبق ملتا ہے؟
     نام دیو کے اوصاف میں سب سے نمایاں وصف کیاہے؟
     مصنف کے خیال میں ایک اچھا انسان کیسے بنا جا سکتا ہے؟
نام دیو کی موت کا سبب کیا تھا؟
لوگ بچوں کا علاج کیلئے نام دیو کے پاس کیوں آتے تھے؟
نام دیو مالی نے انعام لینےسے کیوں انکار کیا؟
نام دیو نے پانی کی قلت کے زمانے میں چمن کو کیسے شاداب رکھا؟

تفصیلی سوالات

“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
بھی بہت صاف ستھرار ہتا تھا اور ایسا ہی اپنے چمن کو بھی رکھتا۔ اس قدر پاک صاف جیسے رسوئی کا چوکا ۔ کیا مجال جو کہیں گھاس پھونس یا کنکر پتھر پڑار ہے ۔ روشیں با قائد و، تھانولے درست، سِنچائی اور شاخوں کی کاٹ چھانٹ وقت پر، جھاڑنا ،بُہارنا صبح شام روزانہ ,غرض سارے چمن کو آئینہ بنا رکھا تھا۔”
“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
باغ کے داروغہ (عبدالرحیم خاں فینسی ) خود بھی بڑے کارگزاراورمستعد شخص ہیں اور دوسروں سے بھی کھینچ تان کر کام لیتے ہیں ۔ اکثر مالیوں کو ڈانٹ ڈپٹ کرنی پڑتی ہے۔ ورنہ ذرا بھی نگرانی میں ڈھیل ہوئی ، ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر بیٹھ گئے یا بیٹری پینے لگے یا سائے میں جالیئے۔ عام طور پر انسان فطرتاً کاہل اور کام چور واقع ہوا ہے۔ آرام طلبی ہم میں کچھ موروثی ہوگئی ہے لیکن نام دیو کو کبھی کچھ کہنے سننے کی نوبت نہ آئی ۔ وہ دنیا ومافیہا سے بے خبر اپنے کام میں لگارہتا۔ نہ ستائش کی تمنا نہ صلے کی پروا۔”
“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
ایک سال بارش بہت کم ہوئی ۔ کنوؤں اور باولیوں میں پانی براۓ نام رہ گیا۔ باغ پر آفت ٹوٹ پڑی۔ بہت سے پودے اور پیڑ تلف ہو گئے ، جو بچ رہے ، وہ ایسے نڈھال اور مر جھاۓ ہوۓ تھے جیسے دِق کے بیمار لیکن نام دیو کا چھن ہرا بھرا تھا اور وہ دُور دُور سے ایک ایک گھڑا پانی کا سر پر اٹھا کر لاتا اور پودوں کو سینچتا. یہ وہ وقت تھا کہ قحط نے لوگوں کے اوسان خطا کر رکھے تھے اور انھیں پینے کو پانی مشکل سے میسر آ تا تھامگر یہ خدا کا بندہ کہیں نہ کہیں سے لے ہی آتا اور اپنے پودوں کی پیاس بجھا تا ۔ جب پانی کی قلت اور بڑھی تو اس نے راتوں کو بھی پانی ڈھوڈھو کے لا نا شروع کیا۔ پانی کیا تھا، یوں سمجھیے کہ آدھا پانی اور آدھی کیچڑ ہوتی تھی”
“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
وہ بہت سادہ مزاج ، بھولا بھالا اور منکسر المزاج تھا۔ اس کے چہرے پر بشاشت اور لبوں پر مسکراہٹ کھیلتی رہتی تھی ۔ چھوٹے بڑے ہرایک سے جھک کر ملتا۔ غریب تھا اور تنخواہ بھی کم تھی ، اس پر بھی اپنے غریب بھائیوں کی بساط سے بڑھ کر مدد کرتارہتا تھا۔ کام سے عشق تھا اور آخر کام کرتے کرتے ہی اس دنیا سے رخصت ہو گیا۔”
“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
گرمی ہو یا جاڑا، دھوپ ہو یا سایا ، وہ دن رات برابر کام کرتا رہا۔ اسے بھی یہ خیال نہ آیا کہ میں بہت کام کرتا ہوں یا میرا کام دوسروں سے بہتر ہے، اس لیے اسے اپنے کام پرفخر یا غرور نہ تھا۔ وہ یہ باتیں جانتا ہی نہ تھا۔ اسے کسی سے بَیر تھا نہ جَلاپا۔ وہ سب کو اچھا سمجھتااورسب سے محبت کرتا تھا۔ وہ غریبوں کی مددکرتا ، وقت پر کام کرتا ،آدمیوں ، جانوروں ، پودوں کی خدمت کر تا.”
“درج ذیل نثر پارے کی تشریح کیجیے۔ خط کشیدہ الفاظ کے معانی، سبق کا عنوان اور مصنف کا نام بھی لکھیے۔
ہر شخص میں قدرت نے کوئی نہ کوئی صلاحیت رکھی ہے ، اس صلاحیت کو درجہ کمال تک پہنچانے میں ساری نیکی اور بڑائی ہے ۔ درجہ کمال تک نہ کبھی کوئی پہنچا ہے، نہ پہنچ سکتا ہے لیکن وہاں تک پہنچنے کی کوشش ہی میں انسان ، انسان بنتا ہے۔ یہ سمجھو کندن ہو جا تا ہے ۔حساب کے دن جب اعمال کی جانچ پڑتال ہوگی ، خدا یہ پوچھے گا کہ میں نے جو استعداد تجھ میں ودیعت کی تھی ، اسے کمال تک پہنچانے اور اس سے کام لینے میں تو نے کیا کیا اورخلق اللہ کواس سے کیا فیض پہنچایا؟ اگر نیکی اور بڑائی کا یہ معیار ہے تو نام دیو نیک بھی تھا اور بڑا بھی ۔ تھا تو ذات کا ڈھیڑ ، پر اچھے اچھے شریفوں سے زیادہ شریف تھا۔”
سبق نام دیو مالی کا خلاصہ لکھیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *